افغان بارڈر اوپن رکھنے اور افغانیوں کو شہریت دینے کی عمران خان کی تجویزکی اہم سیاسی جماعت نے مکمل حمایت کا اعلان کردیا

اسلام آباد (تفہیم ڈاٹ پی کے آن لائن) امیر جماعت اسلامی سینیٹر سراج الحق نے وزیر اعظم عمران خان کی پاک افغان بارڈر اوپن رکھنے اور پاکستان میں مقیم افغانیوں کوشہریت دینے کی تجویز کی مکمل حمایت کرتے ہوئے کہاہے کہ لاکھوں لوگوں کو کینیڈا ٗ امریکہ اور برطانیہ میں شہریت ملی ہے ٗ پاکستان کو بھی اپنے نظام کی وضاحت کر نی چاہیے ٗ اگر نیٹو افواج افغانستان سے نکل جائے تو افغانیوں کی آپس میں صلح کرائی جاسکتی ہے ٗ
دینی جماعتوں کا اتحاد ایم ایم اے الیکشن میں اپنا بیانیہ اور پیغام صحیح معنوں میں عوام تک نہیں پہنچا سکی ٗ عام انتخابات میں دینی جماعتوں کو 55لاکھ ووٹ ملے ہیں ٗ ہم ایک صندوق میں جمع نہیں کر سکے ٗ تحریک انصاف کی پالیسیاں پرانی حکومتوں کی طرح ہیں ٗکوئی فرق یا انقلاب نظر نہیں آرہا ہے ٗسو دن حکومت کو کچھ نہیں کہیں گے ٗ حکومت اچھا کام کریگی تو شاباش دینگے ٗ سعودی عرب اور ایران دونوں کے ساتھ ہمارے تعلقات اچھے ہونے چاہئیں ٗ اپوزیشن کا ہونا حکومت کیلئے ضروری ہے ٗ اگر حکومت ون ویلنگ کرے گی تو کسی حادثے کا شکار ہو سکتی ہے ٗ غداری کے فتوے نہیں لگنے چاہئیں ٗ کسی کو دیوار سے لگانا علاج نہیں ٗلوگوں کو اپنانے اور ایک کر نے کی ضرور ت ہے۔اتوار کو ’’این این آئی ‘‘کو دیئے گئے خصوصی انٹرویومیں سراج الحق نے کہا کہ جماعت اسلامی نے 2013 کے الکشن میں لوئر دیر میں 47ہزار ووٹ حاصل کئے تھے اب 2018ء میں جماعت اسلامی کو 84ہزار ووٹ ملے ہیں اس کے باوجود کامیابی حاصل نہیں ہوسکی ٗاسی طرح دیر بالا میں بھی ہمارے ووٹ میں اضافہ ہوا ہے ۔ایک سوال کے جواب میں سراج الحق نے کہاکہ پانچ سال کے دوران ہمارے ملک میں پاکستان مسلم لیگ (ن)اور پاکستان تحریک انصاف کے درمیان ایک مقابلہ بنایا گیا اور اس میں میڈیا نے بڑا کر دار ادا کیا ہے ۔انہوں نے کہاکہ سوال یہ ہے کہ ایٹم بم بڑی طاقت ہے یا میڈیا بڑی طاقت ہے ٗ لوگ کہتے ہیں کہ ایٹم بم سے انسان جل جاتا ہے لیکن میڈیا انسان کی سوچ اور عقل کو اغواء کرلیتا ہے ۔
انہوں نے کہاکہ میں اعتراف کرتا ہوں کہ دینی جماعتوں کا اتحاد مجلس عمل اپنا بیانیہ اور پیغام عوام تک پہنچا سکی۔ سراج الحق نے کہاکہ ایم ایم اے بہت لیٹ بنی ہے اور بہت سے معاملات ایسے تھے جن میں ٹکٹوں کی تقسیم وغیرہ میں ہمارا بہت وقت لگا ہے ٗ تنظیم سازی میں بھی ہمارا کافی وقت لگا الیکشن کے قریب جا کر ہم نے مہم تو شروع کر لی مگر ہمارے بڑے بڑے جلسے نہیں ہوسکے ٗ ہم ٹرین مارچ کا ارادہ رکھتے تھے وہ بھی مارچ نہیں ہوسکا۔انہوں نے کہاکہ 2002میں متحدہ مجلس عمل وجو د میں آئی تھی اور اس بار دینی جماعتوں کا اس طرح کا اتحاد نہیں ہوسکا اس بار اہل تشیع بھی تقسیم تھے ٗ اہل حدیث بھی تقسیم تھے ٗ
حتیٰ کہ مولانا سمیع الحق اس بار متحدہ مجلس عمل کا حصہ نہیں تھے ۔انہوں نے کہاکہ 2018کے الیکشن میں دینی جماعتوں نے 55لاکھ ووٹ حاصل کئے ہیں اور یہ ووٹ ایک صندوق میں جمع نہیں ہوسکے جس کی وجہ سے وہ کامیابی حاصل نہیں کر سکے جو 2002میں حاصل کی تھی ۔ایک سوال کے جواب میں سراج الحق نے کہا کہ کے پی کے میں مخلوط حکومت پانچ سال کیلئے بنی تھی اور وہ پانچ سال کامیابی کے ساتھ پورے ہوگئے اور ہم پھر علیحدہ ہوئے ٗہمار انتخابی اتحاد نہیں ہوسکا ۔سراج الحق نے کہاکہ ہم 2013ء کے بعد ضمنی انتخابات اور بلدیاتی انتخابات میں بھی پاکستان تحریک انصاف کے ساتھ اتحاد چاہتے تھے ٗ

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں