متحدہ مجلس ملک کوکرپشن سے پاک اسلامی فلاحی مملکت بنائیگی،سینیٹرسراج الحق کاکراچی میں جلسوں سے خطاب

کراچی(تفہیم ڈاٹ پی کےآن لائن)متحدہ مجلس عمل پاکستا ن کے سینئر نائب صدر و امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے کہاہے کہ 25جولائی کو ایم ایم اے کی کامیابی یقینی ہے ، متحدہ مجلس عمل کلین اور گرین پاکستان چاہتی ہے اس ملک کوکرپشن سے پاک اسلامی اور فلاحی مملکت بنائیں گے ،موجودہ قیادتیں ناکام ہوچکی ہیں ،ایم کیو ایم ، پیپلز پارٹی اور ن لیگ نے عوام کے مسائل حل کرنے کے بجائے ان میں اضافہ کیا ہے یہاں تک کہ عوام کوانسان کی بنیادی ضرورت پانی تک سے محرو م کر کے رکھا ۔اس پر حکمرانوں کو شرم سے ڈوب مرنا چاہیئے اور عوام سے معافی مانگنا چاہیئے ،حکمرانوں نے صرف اپنے بنک بیلنس اور محلات میں اضافہ کیا ۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے گزشتہ شب کراچی میں متحدہ مجلس عمل کی انتخابی ورابطہ عوام مہم کے سلسلے میں مختلف قومی وصوبائی اسمبلی کے حلقوں میں دورے کے موقع پر بلدیہ ٹاو ¿ن نمبر 7، باب خیبر میٹروول ، لیاری چاکیواڑہ ، دہلی کالونی میں عوامی جلسوں سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔اس موقع پر جماعت اسلامی کراچی کے امیدوار این اے 250حافظ نعیم الرحمن ، جماعت اسلامی کے رہنما وامیدوار پی ایس 130نسیم صدیقی ، این اے 249کے امیدوار سید عطاءاللہ شاہ ، پی ایس 115کے امیدوار حافظ محمد نعیم ، پی ایس 116کے امیدوار مولانا عمر صادق ،متحدہ مجلس عمل ضلع غربی کے ناظم انتخاب مولانا فضل احد حنیف، متحدہ مجلس عمل کراچی کے سینئر نائب صدر سید حماد اللہ شاہ ،نائب امیر جماعت اسلامی کراچی محمد اسحاق خان ، پی ایس 114کے امیدوار قاری محمد عثمان ، پی ایس 120کے امیدوار عبد الرزاق خان ، پی ایس 119کے امیدوار عطائے ربی ،این اے 246کے امیدوار مولانا نور الحق ، پی ایس 107کے امیدوار فضل الرحمن ، پی ایس 108کے امیدوار سید عبد الرشید اور دیگر نے بھی خطاب کیا ۔باب خیبر میٹروول میں پیپلز پارٹی ،اے این پی ، پی ٹی آئی کے کارکنان نے اپنی سابقہ پارٹیوں کوخیر آباد کہہ کر جماعت اسلامی میں شمولیت اختیار کی۔(جاری ہے)ا

pic sirajul haq

سراج الحق نے خطاب کرتے ہوئے مزید کہا کہ کراچی پاکستان کی معاشی شہہ رگ ہے کراچی ترقی کرے گا تو ملک ترقی کرے گا ،نفرت اور تقسیم کی سیاست نے کراچی کو کچھ نہیں دیا۔انہوں نے کہاکہ صرف نواز شریف کا احتساب کافی نہیں بلکہ ان لوگوں کا بھی احتساب کرنا ہوگا جنہوں نے اسٹیل مل ، پی آئی اے ، واپڈا، پی ٹی سی ایل سمیت دیگر قومی وسرکاری اداروں کو تباہ و برباد کیا ہے ۔ انہوں نے کہاکہ قوم کو اس وقت ایک اہل ، دیانتدار اور امریکا و مغرب سے نہ ڈرنے والی قیادت کی ضرورت ہے جو قوم کو بحران سے نکال سکے۔ انہوں نے کہاکہ 70سال سے کرپٹ مافیا ہم پر مسلط ہے جس نے ملک کو تباہ برباد کردیا ہے ، بے روزگاری ، بد امنی اور کرپشن کو عام کیا ،عوام کوپانی کی بوند بوند کو ترسا کر رکھ دیا ہے ۔25جولائی مجبوروں ، محروموں ،مزدوروں کادن ہے 25جولائی کو کرپٹ مافیا کی مو ت اور نظریہ پاکستان کے علمبرداروں کے لیے خوشی کا د ن ہوگا ۔انہوں نے کہاکہ ہم ملک میں سودی نظام کا خاتمہ اور کرپشن کے نظام سے نجات دلانا چاہتے ہیں ۔عالمی اسٹیبلشمنٹ ،امریکا اور برطانیہ کے غلام اب اسلام کا راستہ نہیں روک سکتے ۔ متحدہ مجلس عمل کے امیدواروں میں کوئی پانامہ لیکس کا بیمار نہیں ہے ۔ انہوں نے کہاکہ ہم پاکستانی شہر ی ہیں ، ہم ٹیکس ادا کرتے ہیں ، مشکل اوقات میں ہم قربانیاںبھی دیتے ہیں آخر کیا وجہ ہے کہ پاکستان میں غریبوں کے بچوں کے لیے علیحدہ او ر امیروں کے بچوں کے لیے علیحدہ اسکول ہیں ، سڑکیں عوام کے ٹیکسوں سے بنتی ہیں چوک میں سرخ بتی کا احترام بھی صرف غریب لوگ کرتے ہیں لیکن وی آئی پی اور نام نہاد لیڈر اورلینڈ کروزر میں چلنے والے سرخ بتی کا احترم نہیں کرتے ۔ ہسپتال میں غریب عوام قطار میں اپنی باری کا انتظار کرتے ہیں ۔میں پوچھنا چاہتاہوں کہ کیا ملک انہوں نے بنایا تھا ؟ انہوں نے کہاکہ یہ لوگ ہمارے کلچر سے نفرت کرتے ہیں ، منبر و محراب کو اپنا دشمن سمجھتے ہیں ، اس لیے یہ لیڈر کہتے ہیں کہ پاکستان میں 80فیصد داڑھی والے چورہیں اور 20فیصد مشکوک ہیں ، یہ عناصرداڑھی دوپٹے سے نفرت کرتے ہیں ۔ 2018کا الیکشن تہذیبوں اورنظریات کے درمیان الیکشن ہے ، 2018کا الیکشن عالمی اسٹبلشمنٹ کے ایجنٹ اور غلامان مصطفی کے درمیان مقابلہ ہے ۔ 2018کا الیکشن فیصلہ کرے گا پاکستان اسلامی ہوگا یا سیکولر اس لیے آپ کا ووٹ نظریے کے لیے ہونا چاہیئے ۔انہوں نے کہاکہ آج بھی ہمارے ملک میں کرپشن اوربے حیائی کا نظام ہے ،قوم کی بیٹی ڈاکٹر عافیہ کو امریکا کے حوالے کیا گیا ، ہمیں آج ملک کو غلامی کے شکنجے سے آزادکرانا ہے ،شہر کی بیٹیاں رات کو سونے کے بجائے پانی کے لیے لگی قطار میں باری کاانتظارکرتی ہے ۔کراچی کی ترقی پاکستان کی ترقی ہے ، یہ مدارس ، علماء،مجاہدین کا شہر ہے ،یہ عاشقان مصطفی کا شہر ہے ۔جنہوں نے اس شہر کو تباہ کیا 25جولائی کو ان کا حساب ہوگا۔انہوں نے کہاکہ عوام کو ایم ایم اے سے امیدیں ہیں جو نفرتوں اور ذاتی مفاد ات سے بالاتر ہوکر دین کا کام کررہی ہے ۔کراچی کے نوجوان ڈگریاں لینے کے باوجود مایوسی کاشکارہیں ان کو ایم کیو ایم اور پیپلز پارٹی نے مایوس کیا ، لوٹوں کے ذریعے کبھی تبدیلی نہیں آتی ، یہ وہ لوگ ہیں جن کا مقدر جیل ہے ، ایم ایم اے کو اقتدار ملا تو چوروں کا احتساب ہوگا ، لوٹی ہوئی دولت ملک میں واپس لائیں گے ، پنامہ لیکس میں 436افراد پر مشتمل افراد کی لسٹ جاری کی ہے لیکن احتساب کے لیے باقی لوگ کیوں نظر نہیں آتے ،ایم ایم اے شہر میں متبادل قوت کی صورت میں سامنے آئے گی ۔ شہر کراچی مختلف زبان بولنے والوں کا گلدستہ ہے ایم ایم اے اس گلدستہ کو مزید نکھارے گی۔حافظ نعیم الرحمن نے کہاکہ جماعت اسلامی کے نامزد امیدوار عوام کے درمیان رہنے والے لوگ ہیں ، عوام کا درد رکھنے والے لوگ ہیں ، عوام کے مسائل حل کرنے والے لوگ ہیں ، ہر گزرتے دن میں متحدہ مجلس عمل کی مقبولیت میں اضافہ ہورہا ہے ، عوام کتاب پر مہر لگاکر ان تمام پارٹیوں سے جان چھڑائیں جنہوں نے ملک کو قرض میں ڈبویا ہے۔کراچی میں رہنے والے بوند بوند پانی کو ترس رہے ہیں ، 25جولائی کو عوام ان سب سے انتقام لیں گے ۔ پیپلز پارٹی اور ایم کیو ایم نے مخلوط حکومت کر کے کراچی کے عوام کودھوکا دیا اور مسائل سے دوچار کیا ۔ایم کیو ایم نے واٹر بورڈ میں 9000بھرتیاں کیں اس کے باوجود شہریوں کوپانی کی بوند بوند کو ترسایاگیا۔ مسلم لیگ ن والے الیکشن آتے ہی کراچی میں نظر آنے لگے ہیں الیکشن کے بعد عوام کے درمیان نظر نہیں آتے ۔اس لیے کہ یہ سب ایک ہیں ۔ملک کے غداروں کو ایوانوں کے بجائے جیلوں میں ڈالنا ہے ۔15 جولائی کو یونیورسٹی روڈ پر تاریخی جلسہ ہوگااور اس بات کو ثابت کردے گا کراچی متحدہ مجلس کا ہے ۔انہوں نے کہاکہ شہر کراچی تعمیر و ترقی کی علامت تھا بد قسمتی سے بعض عناصر نے کراچی کی روشنیوں کو تباہ وبرباد کیا ۔ 30سال کے تجربے نے ثابت کردیا ہے کہ لسانیت و عصبیت سے عوام کے مسائل حل نہیں ہوسکتے ۔ 2001سے 2004تک نعمت اللہ خان نے K3منصوبہ بنایا اور مکمل کیا جس سے شہریوں کو پینے کا صاف پانی فراہم کیا گیا اور اس کے بعد K4منصوبہ پیش کیا جسے تعطل اور تاخیر کا شکا رکیا گیا۔2005سے ا ب تک ایک قطرہ پانی میں اضافہ نہیں کیا گیا بلکہ جو پانی شہریوں کو ملنا تھا اس پانی کو بھی بحریہ ٹاو ¿ن کوفروخت کردیا گیا ۔ان تمام کرپٹ مافیا سے چھٹارے کا دن 25جولائی ہے ۔کے الیکٹرک کے خلاف کسی بھی سیاسی جماعت نے آواز نہیں اٹھائی ،جسٹس وجیہہ نے خود اعتراف کیا ہے کہ ابراج گروپ دبئی میں پی ٹی آئی کو فنڈ فراہم کرتا ہے ،جماعت اسلامی کی کسی قیادت پر کرپشن کا داغ نہیں ہے ۔#

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں