ایم ایم اے کی خواتین پولنگ سٹیشنوں پرکیاکرینگی؟صوبائی رہنمااور امیدوارپی کے62نےایساآرڈردے ڈالاکہ دیگرجماعتوں کوشائد خواتین پولنگ ایجنٹ بھی نہ ملے

پرویزخٹک نے تو جیل جاناہے،اسٹبلشمنٹ بھی اپنے حدود میں رہےقاضی حسین احمد،علامہ نورانی اورسراج الحق بہت اچھے تھے،لیکن اگرتم لوگوں نے کچھ گڑبڑکی توپھرہم اچھے لوگ نہیں ہونگے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نوشہرہ(تفہیم ڈاٹ پی کےآن لائن)متحدہ مجلس عمل کے ضلعی صدر آصف لقمان قاضی کی جانب سے مقامی ذمہ داران و امیدواران کے اعزازمیں گذشتہ روز دئے گئےعید ملن میں متحدہ مجلس عمل و جے یوپی کے صوبائی رہنما اور امیدوار حلقہ پی کے 62انجینئرامیر عالم خان نے کہا کہ ہم شرافت کی سیاست کے قائل ہیں لیکن ہم نے گذشتہ تیس سال سے نوشہرہ میں خصوصا اور خیبرپختونخوا میں عمومادیکھا ہے کہ سیاسی دہشت گرد بے شرم خواتین کو پولنگ سٹیشنوں میں بٹھا کر خواتین سے زبردستی ووٹ کی پرچیوں پر ٹپے لگواتے ہیں اس لئے ہم نے بھی آستینیں چڑھا دیں ہیں اور ہماری تربیت یافتہ خواتین اس بار پولنگ سٹیشنوں میں موجود رہینگی اور ہم نے اپنے مجاہد خواتین کو اس حوالے سے مکمل ٹریننگ دی ہے(جاری ہے)ویڈیوکےبعد

انہوں نے کہا کہ اگر کسی خاتون نے کسی پولنگ سٹیشن پر کسی سے زبردستی یادھوکہ دہی سے ووٹ چیننے کی کوشش کی تو پھر ذمہ داری ان کے اپنے سر ہوگی کیونکہ ہم نے اپنے خواتین کو اس حوالے آرڈر دیا ہے اور وہ موقع پر کسی کی آرڈر کی منتظر نہ ہونگی ،انہوں نے کہا کہ اگر متحدہ مجلس عمل کی مجاہدخواتین الیکشن کو الیکشن کم اور کفر وباطل کا معرکہ زیادہ سمجھتی ہیں ،اس لئے ہم تمام جماعتوں اور خصوصا پی ٹی اآئی کو وارننگ دیتے ہیں کہ اگر انکی خواتین کی طرف سے کوئی بدتمیزی کی صرف کوشش بھی ہوئی تو اسکا جواب انتہائی سخت آئیگااور اسکی وجہ اسلام پر شیدا اور جان و مال نچاور خواتین کی پولنگ سٹیشنوں پر موجودگی ہوگی.انہوں نے کہا کہ میں تو اعلان کرتا ہوں اسلام پر شیدا جس خاتون نے بھی بتمیزی اور بد اخلاقی کرنے والی پی ٹی آئی یا دوسری جماعت کی کسی خاتون کو دیکھا اور اسے سرکے بالوں سے پکڑ کرپولنگ سٹیشن سے پاہر پھینک دیا تو میں اس مجادہ کو انعام دونگا.انہوں نے کہا کہ یہ بات جو میں کہہ رہاہوں بڑے ہوش سے کہہ رہاہوں کیونکہ اس دفعہ ہم اپنے خواتین و طالبات کے تیور دیکھ کرغیرمعمولی صورتحال محسوس کررہے ہیں.انہوں نے کہا کہ ہم خواتین پولنگ سٹیشنوں پر میریٹ اور آزادی سے خواتین کےووٹ ڈالوانےکیلئے کسی بھی حد تک جائنگے.انہوں نے کہا کہ اگر یہ لوگ سیاسی دہشت گردی کرتے ہیں تو پھر ہم اینٹ کاجواب پتھر سے دینے کیلئے گذشتہ ایک سال سے ہوم ورک کرکے اپنی خواتین کو میدان میں لارہے ہیں اور انشاء اللہ یہ باپردہ خواتین اس دفعہ ایک نئی تاریخ رقم کرینگی

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں