تعلیم دشمنوں کے چہرے پر زور دار طمانچہ!دیامر میں نذرآتش کئے گئے سکول کب سے کھلیں گے؟اعلان کردیا گیا،طلبا میں خوشی کی لہر

تعلیم دشمنوں کے چہرے پر زور دار طمانچہ!دیامر میں نذرآتش کئے گئے سکول کب سے کھلیں گے؟اعلان کردیا گیا،طلبا میں خوشی کی لہر

دیامر(نیوز ڈیسک)گلگت بلتستان کی حکومت نے شدت پسندوں کے حملوں کا نشانہ بننے والے ضلع دیامر کے تمام اسکولوں میں یکم ستمبر سے کلاسز کے دوبارہ آغاز کا فیصلہ کر لیا ہے۔ ذرائع کے مطابق حکومت نے دہشت گردوں کو شکست دینے کے لیے تعلیمی اداروں میں نصابی سرگرمیوں کے دوبارہ آغاز کا فیصلہ کیا ہے ذرائع نے بتایا کہ حکومت نے اسکولوں اور محکمہ تعلیم کے عہدیداران کو ہدایت کی ہے کہ وہ فوری اپنی ذمہ داریاں سنبھالیں۔ جبکہ حملوں کا نشانہ بننے والے اسکولوں کی مرمت آئندہ 2 سے 3 روز میں شروع ہوجائے گی۔ان کا کہنا تھا کہ دیامر میں کشیدگی کے نتیجے میں معطل ہونے والی معمول کی سرگرمیا ں بحال ہوگئی ہیں۔یاد رہے کہ 3 اور 4 اگست کی درمیانی شب گلگت بلتستان میں نامعلوم شرپسندوں نے رات کے اندھیرے میں لڑکیوں کی تعلیم کے لیے قائم 12 درسگاہوں کو نذر آتش کردیا تھا، بعدِ ازاں 2 مزید اسکولوں کے خاکستر ہونے کی اطلاعات موصول ہوئیں۔4 اگست کو چیف جسٹس آف پاکستان میاں ثاقب نثار نے دیامر اور چلاس میں دہشت گردوں کی جانب سے اسکولوں کو نذرِ آتش کرنے کے واقع پر ازخود نوٹس لے لیا تھا۔بعد ازاں پولیس نے دعوی کیا کہ گلگت بلتستان کے علاقے دیامر میں لڑکیوں کے 14 اسکولوں کو نذر آتش کرنے والا مشتبہ دہشت گرد سرچ آپریشن کے دوران فائرنگ کے تبادلے میں ہلاک ہوگیا جبکہ اس دوران ایک پولیس جوان نے جامِ شہادت نوش کیا۔گلگت بلتستان حکومت نے انتظامیہ کو خاکستر ہونے والے اسکولوں کو 15 روز میں تعمیر کرنے کا حکم دیا تھا۔دیامر میں ہی دہشت گردوں کی جانب سے سیشن جج ملک عنایت الرحمن کی گاڑی پر فائرنگ کی گئی تاہم وہ اس حملے میں محفوظ رہے۔جج ملک عنایت الرحمن تانگیر میں شہید ہونے والے پولیس اہلکار کی نمازِ جنازہ کے لیے جارہے تھے کہ راستے میں ان پر قاتلانہ حملہ ہوا۔

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں