سینیٹر سراج الحق : گوادر میں ماہی گیروں کے اجتماع سے خطاب

لاہور(تفہیم ڈاٹ پی کے آن لائن) امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے کہاہے کہ بلوچستان کی زمین ، پہاڑوں ، سمندر اور یہاں کے وسائل پر بلوچستان کے عوام کا حق ہے جسے کوئی چھین نہیں سکتا۔ گوادر پر کوئی باہر سے آ کر قابض نہیں ہوسکتا ہم اپنے سمندر کے پانی کا ایک قطرہ بھی کسی کو دینے کے لیے تیار نہیں ۔ سی پیک کی حمایت کرتے ہیں ، مگر گوادرکی زمین گوادر والوں کے پاس رہے گی ۔ بلوچستان کے عوام محب وطن ہیں آج اگر ان کی آنکھوں میں نفرت اور چہرے پر غضب ہے تو وہ ان محرومیوں کا ردعمل ہے جو حکمرانوں کی غلط پالیسیوںاور وعدہ خلافیوں کی وجہ سے ان کا مقدر بنا دی گئی ہیں ۔گوادر سے پسنی اور جیوانی تک ایک ہزار کلو میٹر کے ساحل سمندر پر بسنے والے لاکھوں ماہی گیر پاکستان کے شہری ہیں ۔ بلوچستان وسائل سے مالا مال صوبہ ہے جس میں بیش قیمت معدنیات اور سونے اور تانبے کے ذخائر ہیں ۔ محنتی نوجوان اگر غاروں اور پہاڑوں پر گئے ہیں تو اس کے ذمہ دار مشرف ، زرداری اور اب نوازشریف ہیں ۔ بلوچستان کی پسماندگی اور بے انتہا غربت حکمرانوں کے تحفے ہیں ۔ ماہی گیروں کو حقیر سمجھ کر ان کے حقوق پر ڈاکہ ڈالنے والوں کو گریبانوں سے پکڑیں گے ۔ ماہی گیروں کے لیے اقتدار کے ایوانوں میں آوازاٹھائیں گے اور ملک کے گلی کوچوں میں غریبوں کے حقوق کی جنگ لڑوں گا ۔ ان خیالات کااظہار انہوں نے یوم مئی کے حوالے سے فش ہاربر گوادر میں منعقدہ ماہی گیروں کے بڑے اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔ اس موقع پر امیر جماعت نے ملک بھر میں ماہی گیر بچاﺅ تحریک شروع کرنے کا بھی اعلان کیا ۔ تقریب کے بعد امیر جماعت سینیٹر سراج الحق نے ماہی گیروں اور مچھیروں کے ساتھ کھانا بھی کھایا ۔ اس موقع پر بلوچستان کے صوبائی امیر مولانا عبدالحق ہاشمی اور صوبائی سیکرٹری جنرل مولانا ہدایت الرحمن بھی موجود تھے ۔
سینیٹر سراج الحق نے کہاکہ جماعت اسلامی ملک میں کسانوں ، مزدوروں اور پسے ہوئے عوام کے حقوق کی جنگ لڑ رہی ہے ایک طرف اسلام آباد کے محلوں میں بیٹھے ظالم حکمران عوام کے لیے عذاب بنے ہوئے ہیں اور ان کی کرپشن اور عوام دشمن پالیسیوں سے ملک میں مہنگائی ، غربت اور جہالت نے ڈیرے ڈال رکھے ہیں ، دوسری طرف دن رات محنت کرنے اور خون پسینہ ایک کر کے ملک کی ترقی و خوشحالی کے لیے کوشش کرنےوالوں کے حقوق غصب کیے جارہے ہیں ۔ سینیٹر سراج الحق نے حکمرانوں کو متنبہ کیاکہ جماعت اسلامی کسی صورت بھی گوادر کی اکثریتی مقامی آباد ی کو اقلیت میں بدلنے کی اجازت نہیں دے گی ۔ گوادر ، گواد ر والوں کا ہے اور انشاءاللہ قیامت تک انہی کا رہے گا ۔ یہاںکی آبادی کو بے دخل کرنے کا اختیار کسی کے پاس نہیں ۔ انہوں نے کہاکہ اسلام آباد کے حکمرانوں نے ان وعدوں کو پورا نہیں کیا جو بلوچستان کے عوام کے ساتھ قائداعظم نے کیے تھے ۔ انہوں نے کہاکہ حکمران جب یہاں وی آئی پیز بن کر آتے ہیں تو مقامی آبادی کو ان کے گھروں میں قید کر دیا جاتاہے اور انہیں پورا پورا دن گھروں سے نکلنے کی اجازت نہیں دی جاتی ۔ حکمران فرعون کے انجام کو یاد رکھیں اس طرح کے ظلم و جبر سے نفرتیں جنم لیتی ہیں ۔ انہوں نے کہاکہ ایک طرف گوادر علاقے کی ترقی و خوشحالی کا گیٹ وے بن رہاہے ، دوسری طرف یہاں کے لوگ پینے کے صاف پانی سے بھی محروم ہیں اور بچے بغیر چھت کے سکولوں اور ٹینٹوں میں بیٹھ کر تعلیم حاصل کرنے پر مجبور ہیں ۔گوادر کی ترقی اور عا م آدمی کی خوشحالی کے لیے حکمرانوں کے پاس کوئی منصوبہ نہیں ، وہ سرداروں ، جاگیرداروں اور سرمایہ داروں کو خوش رکھتے ہیں ۔ مزدوروں محنت کشوں کی نمائندگی اسمبلیوں میں موجود نہیں اور جو مزدوروں کی نمائندگی کے دعویدار خود جاگیردار اور سرمایہ دار ہوتے ہیں ، جنہیں مزدوروں کے مسائل کا کوئی علم ہے نہ انہیں ان کے مسائل سے کوئی سروکار ہے ۔ سینیٹر سراج الحق نے یوم مئی کے حوالے سے کہاکہ ورکشاپوں ، ہوٹلوں اور کھیتوں میں کام کرنے والے لاکھوں غیر رجسٹرڈ مزدوروں کی فلاح و بہبود کے لیے حکمرانوں کے پاس کوئی پروگرام اور منصوبہ نہیں ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Shares
Skip to toolbar